‘Masters Not Friends’ an Urdu Poem by Masood Munawar

ماسٹرز ناٹ فرینڈز
مسعود مُنّور

View in roman script

بن کر فرینڈز بیر کماتے ہیں ماسٹرز

چھت پر مری ڈرون اُڑاتے ہیں ماسٹرز

مونچھوں سمیت بھُون کے تارا مسیح کا بھوت

کیسی چِتا فضا میں جلاتے ہیں ماسٹرز

بُو لہب ، کیپ پہن کے بیٹھا ہے جیپ میں

ریموٹ سے وہ جیپ چلاتے ہیں ماسٹرز

ایتھنز سے چُرا کے جو لائے تھے بیگ میں

سقراط کا وہ زہر پلاتے ہیں ماسٹرز

ڈالر چڑھا رہے ہیں وہ داتا کی قبر پر

درویشیوں کا جال بچھاتے ہیں ماسٹرز

القاعدہ ہے اُن کی ہی ایجادِ بے مثال

اس شعبدے کو روز دکھاتے ہیں ماسٹرز

کل جو مجاہدین تھے اب طالبان ہیں

کایا کلپ کا پہیہ گھماتے ہیں ماسٹرز

اِک بد نصیب مُلک کے بد کار حکمراں

جن کو حرام مال کھلاتے ہیں ماسٹرز

رکھتے ہیں اُن کے دینی عقائد پہ بھی گرفت

اک قوم کا مذاق بناتے ہیں ماسٹرز

یہ آرمی کا چیف ہو یا صدر مُلک کا

ہر ایک کو پریڈ کراتے ہیں ماسٹرز

داڑھی پہن کے چڑھتے ہیں منبر پہ روز و شب

پٹی منافقت کی پڑھاتے ہیں ماسٹرز

آئے گا کس طرح سے گلوبل ولیج میں امن

جب جنگ کا بگل ہی بجاتے ہیں ماسٹرز

اسلام دشمنی سرِ فہرست ہے حضور

کب دوستی کا ہاتھ بڑھاتے ہیں ماسٹرز

جن کو وہ حکمران بناتے ہیں سازشاً

اُن بندروں کو خوب نچاتے ہیں ماسٹرز

ہیں مسجدوں میں اُن کے ایجنٹوں کا کاروبار

بیوپار ہی میں مال لگاتے ہیں ماسٹرز

اِن نابغوں کے پیچھے ہو مسعود کیوں پڑے

کیا تیری گائے بھینس چُراتے ہیں ماسٹرز

Masood Munawar


View in roman script

Masters Not Friends
Masood Munawar

bun ker friend baer kmaatay haiN masters
chhuth per meri drone urratay haiN masters

monchhoN smait bhoon ke Tara Masih ka bhoot
kaisi chita fiza maiN jlaatay haiN masters

boo lehb, cap pehn ke beThha hai jeep maiN
remote se vo jeep chlaatay haiN masters

Athens se chura ker jo layay thay bag maiN
Sucrat ka vo zehr plaatay haiN masters

dollar chrrah rahay haiN vo data ki qabr per
derveshiyoN ka jaal bechhaatay haiN masters

Al-Qaida hai unn ki hee aejaad bemisaal
uss shobday ko roz dkhhaatay haiN masters

kal jo mujahedeen thay ab taliban haiN
kaya kalap ka pehia ghumaatay haiN masters

ik bad naseeb mulk ke badkaar rehnuma
jin ko haraam maal khhilaatay haiN masters

rakhhtay haiN unn ke dinee eqayed pe bhi grift
ik qaum ka mizaaq urraatay haiN masters

ye army ka chief ho ya sadar mulk ka
her aik ko parade kraatay haiN masters

daarhee pehn ke churrhtay haiN mimber pe rozo shab
paTee munafqat ki pRhaatay haiN masters

ayay ga kiss taraH se global village maiN aman
jab jung ka bigl hee bjaatay haiN masters

islaam dushmani sare fehrisst hay huzoor
kab dosti ka haath barrhaatay haiN masters

jin ko vo hukmaraan bnaatay haiN sazeshan
unn bandroN ko khoob nchaatay haiN masters

haiN masjadoN maiN unn ke agentoN ke karobaar
bewpaar hee maiN maal lagaatay haiN masters

inn nabghooN ke peechhay ho masood kiyuN parray
kia teri gai bhens churaatay haiN masters

Masood Munawar

From Ijaz Syed

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s